Life On Mars

سائنسدانوں اور ماہر فلکیات کی اولین ترجح ہمیشہ سے زمین جیسے دوسرے سیارے ڈھونڈنے میں رہی ہے۔ کافی عرصے سے زندگی کی تلاش کے لیئے مریخ ہی صحح سیارہ سمجھا جاتا رہا ہے۔ اس کی فضا زندگی کے ہونے کے لیئے موضوع لگتی ہے۔

گیل دھانے پر دریافتیں

life on marsیہ ممکن ہے کہ گیل دھانے پر پرانی جھیلوں میں کبھی زندگی پیدا ہوی ہو۔ یہ جگہ زمین پر سمندر کی گہرائی جیسا ماحول رکھتی ہے۔ ناسا کے کریوسٹی روور سے لی گئی تصاویر سے پتا چلتا ہے کہ اس جگہ پر زندگی کی افزائش کے لیئے تمام مادے موجود ہیں۔

مریخ پر خوردبینی جاندار(جرثومے)

کریوسٹی روور اس دھانے کی سطح پر 2012 سے شواہد ڈھونڈ رہا ہے کہ کبھی اس سیارے پر زندگی موجود تھی کہ نہیں۔ چونکہ، مریخ پر کوئی بڑے جاندار نہیں دیکھے گئے اس لیئے سانسدانوں کی توجہ جرثومے ڈھونڈنے میں ہے۔ روور کی تحقیق سے یہ اندازہ لگایا جا سکتا ہے کہ اربوں سال پہلے اس دھانے میں زندگی موجود تھی۔ سائنسدانوں کا خیال ہے کہ یہ جھیل کبھی پانی سے بھری ہو گی جو وقت گزرنے کے ساتھ خشک ہو گئی۔
life on mars
سانئنسدان اس جگہ کا ارضیاتی اور یہاں کی مٹی کی کیمیاتی بناوٹ کا پتا لگانے میں کام کر رہے ہیں۔ ان کی یہ بھی کوشش ہے کہ یہاں کے پتھروں اور مٹی میں موجود نمکیات کا مطالعہ کیا جائے۔ یہ اندازہ لگایا جاتا ہے کہ اس طرح کی پتھریلی بناوٹ زمین پر بننے میں تقریباً ایک کروڑ سال لگتے ہیں تو مریخ پر ایسے پتھر اربوں سالوں میں بنے ہوں گے۔

سائنسدانوں کو اس تحقیق سے پتا چلا ہے کہ یہاں گہرائی کی بجائے سطح پر زیادا آکسیڈنٹ پائے جاتے ہیں۔ اس کا یہ مطلب ہے کہ اس جھیل کے سطح والے پانی میں آکسیجن وافر مقدار میں ہو گی۔ اس دریافت سے یہ بھی کہا جا سکتا ہے کہ مریخ پر کافی قسم کے جاندار پائے جاتے ہوں گے جن میں سے کچھ شائد آج بھی اس مٹی میں موجود ہوں۔

یہ سب دریافتوں سے مریخ پر تحقیق کے نئے راستے کھلتے ہیں۔ اگر جرثومے اس سخت ماحول میں زندہ رہ لیتے ہیں تو شائد کہیں نا کہیں بڑے جاندار بھی موجود
ہوں۔ مریخ پر کے ایسے حالات سے لگتا ہے کہ یہ سیارہ زمین کے علاوہ زندگی کے لیئے سب سیاروں سے زیادہ موضوع ہے۔

کائنات میں اور بھی بہت سی دنیایں ہیں جہاں زندگی موجود ہو سکتی ہے۔ انہیں میں سے ایک مشتری کا چاند یوروپا بھی ہے۔ اس چاند کے بارے میں جاننے کے لیئے یہ مضمون پڑھیں۔ یوروپا، زندگی کے لئیے معاون چاند

Navigation:

ایک جواب برائے “گیل دھانے کی دریافت اور مریخ پر زندگی”

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے