وویجر 1 کے انجن 1980 کے بعد پہلی بار چلائے گئے

وویجر 1 انسان کا بنایا ہوا پہلا مصنوعی سیارہ ہے جو ہمارے نظام شمسی کی حدود سے پار گیا ہے۔ یہ خلائی سیارہ 1977 میں خلاء میں بھیجا گیا تھا اور آج تک زمین پر سائنسدانوں سے رابطے میں ہے۔ "وویجر 1 کے انجن 1980 کے بعد پہلی بار چلائے گئے " پڑھنا جاری رکھیں

Life On Mars

گیل دھانے کی دریافت اور مریخ پر زندگی

سائنسدانوں اور ماہر فلکیات کی اولین ترجح ہمیشہ سے زمین جیسے دوسرے سیارے ڈھونڈنے میں رہی ہے۔ کافی عرصے سے زندگی کی تلاش کے لیئے مریخ ہی صحح سیارہ سمجھا جاتا رہا ہے۔ اس کی فضا زندگی کے ہونے کے لیئے موضوع لگتی ہے۔
"گیل دھانے کی دریافت اور مریخ پر زندگی " پڑھنا جاری رکھیں

ڈسک کہکشاں اور کہکشاوں کا ارتقاء

کہکشایں عام طور پر مستقل حرکات میں پائی جاتی ہیں۔ ان کی یہ حرکت گھومتی ہوئی ڈسک کی شکل میں ہوتی ہے۔ ان کے مشاہدے سے یہ دریافت ہوا ہے کہ ڈسک شکل والی کہکشاوں میں سے ستاروں کی پیدائش سپائرل کہکشاوں کی نسبت کم ہوتی ہے۔
"ڈسک کہکشاں اور کہکشاوں کا ارتقاء " پڑھنا جاری رکھیں

Jupiter: A gas giant

مشتری: پراسرار گیس جائنٹ

مشتری نظام شمسی کا پانچواں سیارہ ہے اور باقی تمام سیاروں سے بڑا ہے۔ یہ ہمیشہ سے مشہور خلائی ادارے ناسا کی توجہ کا مرکز رہا ہے۔ یہ سیارہ گیس کے بڑے بڑے بھنوروں اور پٹیوں سے بنا ہے۔ یہ گیس کے بادل زیادہ تر امونیا اور پانی سے بنے ہیں۔ سیارے پر موجود آنکھ کی شکل میں لال رنگ کا نشان ہے جسے ریڈ سپاٹ بھی کہا جاتا ہے۔ یہ نشان بہت تیز چلنے والے طوفان کا نتیجہ ہے اور یہ طوفان سائز میں زمین سے بھی بڑا ہے۔ مشتری کا نام قدیم رومی دیوتا کے نام پر رکھا گیا ہے۔ مشتری کے تقریباً پچاس چاند ہیں اور ان کے علاوہ اور چھوٹے چاند بھی ہیں جن کی ابھی تصدیق نہیں ہوئی۔ "مشتری: پراسرار گیس جائنٹ " پڑھنا جاری رکھیں

Europa: Life supportive moon of Jupiter

یوروپا: مشتری کا زندگی کے لیئے معاون چاند

حالیہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ مشتری کے ایک چاند یوروپا پر زندگی کے لیئے سازگار حالات ہو سکتے ہیں۔ یوروپا کی سطح برف سے بنی ہوئی ہے اور اس کے نیچے پانی ہے جو کہ ایک اندازے کے مطابق زمین کے پانی سے بھی زیادہ ہے۔ برف کی سطح اس کے نیچے پانی کو مضر شعاعوں سے بھی محفوظ رکھتی ہے۔ "یوروپا: مشتری کا زندگی کے لیئے معاون چاند " پڑھنا جاری رکھیں

Black hole-world's greatest mysteries

کائنات کی پراسرار ترین چیز: بلیک ہول

بلیک ہول، جیساکہ نام سے ہی پتہ چلتا ہے کہ یہ بہت گہری کالی چیز ہے۔ خلا میں بلیک ہول ایک ایسی چیز ہے جس کی کشش ثقل اتنی طاقتور ہے کے اس میں سے روشنی بھی نہیں نکل سکتی۔ بلیک ہول کی کشش ثقل اس لیئے اتنی زیادہ ہوتی ہے کیونکہ اس میں بہت زیادہ انرجی ایک چھوٹی سی جگہ میں اکٹھی ہو جاتی ہے۔ بہت زیادہ کشش ثقل ہونے کی وجہ سے یہ اپنے اردگرد کے ستارے بھی نگل جاتا ہے۔ بلیک ہول زیادہ تر تباہ شدہ ستاروں سے بنتا ہے۔
"کائنات کی پراسرار ترین چیز: بلیک ہول " پڑھنا جاری رکھیں

The Origin of Our solar system

نظام شمسی کی ابتدا

کائنات کی تخلیق اور اس میں کہکشاوں کے وجود میں آنے کا تذکرہ ہم پچھلے مضامین میں کر چکے ہیں۔ اب ہم بات کریں گے ہمارے نظام شمسی کی ابتدا کی۔ جیسا کہ زندگی سے نئی زندگی کی پیدائش ہوتی ہے ویسے ہی ستاروں سے بھی نئے ستارے بنتے رہتے ہیں۔ ستارے تباہ ہو کر سپر نووا ( supernova) بنتے ہیں اور ان سے نئے ستارے وجود میں آتے ہیں اور یہ سائیکل چلتا رہتا ہے۔
"نظام شمسی کی ابتدا " پڑھنا جاری رکھیں

Problems with Big Bang Theory

بگ بینگ تھوری کے مسائل

جیسا کہ پہلے مضمون بگ بینگ (Big Bang) تھیوری میں انسان کے بہت سے سوالات کا تزکرا کیا گیا تھا۔ بگ بینگ (Big Bang) تھیوری اس کائنات کے بہت سے پوشیدہ رازوں کا انکشاف تو کرتی ہے پر ساتھ ہی اس میں اور بہت سے سوالات آ جاتے ہیں۔ جیساکہ کائنات کا پھیلنا کیسے شروع ہوا؟ "بگ بینگ تھوری کے مسائل " پڑھنا جاری رکھیں